Meesha Shafi from Coke Studio Exposed! Urdu/Hindi

20



FB Page https://web.facebook.com/WeAreWatchersEndTimesNWO Shafi made her film debut with a supporting role in the 2013 Mira Nair’s film The Reluctant …

source

20 Responses

  1. ye illumnati hi haii…. bhaiii

  2. Allah he janta ha… Kiya such ha kiya jooth

  3. Shahzaib Ch says:

    Is awam k pas r bht kosh ha apna sar khapany k liye yr stop this putr

  4. fitay mu o teri soch k

  5. D J says:

    bless u alwaz. can u please explaine how they become illuminati…

  6. Yas mery bhai ya shi ha

  7. yes m totaly agree with u..similarly salman taseer was the supporter of illumantii.

  8. Axphey007 says:

    Good one !
    YOu have already made over $2k.
    HATERS GONNA HATE.

  9. dost app sahi bol rahy ho..

  10. Allah sirf acha hosakta hai… bora tu insaan karty hai..

  11. is lanati laki ko Zameen me zinda Dargor do

  12. khan bilal says:

    you are mental bro go to a phycatirist

  13. hassy khaan says:

    yes ruda you sense of humor is good and almaas your research is very noticeable good keep it up we are with you tc

  14. yes u r Cristian I know you are right absolutely right

  15. yes I m Muslim I know you are right absolutely right

  16. rkalawfirm says:

    شیطان کا سب سے کارگر حربہ۔ حق اور باطل کی تلبیس۔ تلبیس کا مطلب ھوتا ھے دو مختلف چیزوں کو آپ میں ملا دینا۔ ملاوٹ کر دینا۔ اس طرح ملا دینا کہ دونوں ایک ہی نظر آئیں۔ آپ نے اگر کبھی لاھور یا کراچی میں یا پاکستان کے کسی اور شہر میں فری میسنز کی کوئی پرانی عمارت دیکھی ھو تو اس میں عمارت کے مرکز میں ایک بہت بڑا ھال ضرور نظر آیا ھوگا۔ ھال کے فرش پر دو رنگوں کے خانے بنے ھونگے ۔ یہ خانے بالکل شطرنج کی بساط کی طرح ایک دوسرے سے ملے ھوتے ہیں۔ دنیا بھر میں فری میسن کی تمام عمارتوں میں ایسے ہی ھال بنے ھوتے ہیں اور ان کے فرش بالکل اسی طرح شطرنج کے خانوں جیسے ھوتے ہیں۔
    یہ ایک پیغام ھے ۔
    یہ ایک اھم پیغام ھے ۔ اگر آپ نے انتہائی خفیہ کتاب یہودی پروٹوکولز کا مطالعہ کیا ھے تو اس میں درج ھے کہ کسی کے مذھب کو برا مت کہو لیکن برائیوں کو بھی ان کے مذھب کے ساتھ اس طرح ملا دو کہ وہ بھی مذھب کا ایک حصہ معلوم ھوں۔
    شیطان بھی اپنے چیلوں کو یہی درس دیتا ھے کہ لوگوں کو ان کے مذاھب سے دور نہیں کیا جا سکتا لیکن تم برائی کو بھی ان کی زندگییوں کا ایک حصہ بنا دو۔ وہ خود ہی مذھب سے دور ھوتے چلے جائیں گے اور ایک وقت ایسا آئے گا کہ وہ گناہ کی کشش سے متاثر ھوکر گناہ کو اختیار کر لیں گے۔
    فری میسنز کی عمارتوں میں ان سیاہ اور سفید خانوں کا مطلب بھی یہی ھے کہ سیاھی (گناہ) اور سفیدی ( نیکی کا راستہ) ایک جیسے ھوتے ہیں ان میں فرق مت محسوس کرو ۔
    ھمارے اردگرد اگر غور سے دیکھا جائے تو یہ شیطان یہ حربہ آپ کو پورے عروج پر نظر آئے گا۔ شیطانیت کے سے سب سے بڑے مبلغ میڈیا کو دیکھ لیجئیے۔ ایک ہی شو میں شو کا آغاز بسم اللہ ، حمد ونعت اور قرانی آیات سے ھوگا اور آگے چل کر اسی شو میں نیم عریاں لباس والی لڑکیاں ناچتی گاتی اور فحش جملے بازی کرتی نظر آئیں گی۔ پاکستانی یا انڈین فلموں کو دیکھ لیجئیے فلم کے آغاز میں خدا کا نام لیا جائے گا اور اس کے بعد اسی فلم میں آگے چل کر قتل و غارت گری فحش ڈانس ذومعنی جملے اور شراب و شباب کی محفلیں سجی ہوئی دکھائی جائیں گی۔
    ایسے شوز اور فلموں کو دیکھنے والے اس کے آغاز کو زھن میں رکھتے ہوئے سوچتے ہیں کہ وہ جو دیکھ رھے ہیں وہ قطعا" گناہ یا برائی نہیں۔ ان کو اور ان کی اولادوں کو ان کے ذریعے جو تربیت ملتی ھے اس میں کچھ بھی غلط نہیں۔
    ھمارے بچوں کے سکولوں میں سکول کا آغاز تلاوت سے ھوتا ھے اور انہی سکولوں میں بچوں بچیوں کو ناچنے گانے کی ٹریننگ اس طرح دی جاتی ھے جیسے یہ بھی ان کے دین کا حصہ ھے۔
    رمضان جیسے مقدس مہینے میں رمضان کے نام پر بے حیائی اور فحاشی کا وہ بازار گرم کیا جاتا ھے جس کی عام دنوں میں مثال ہی نہیں ملتی۔۔
    یہ تلبیس یا ملاوٹ اس قدر عام ھوچکی ھے کہ یہ ھماری زندگیوں کا حصہ بن کر رہ گئی ھے ۔ ھم رزق حرام اور ناجائز کمائی کو بھی اللہ کا فضل قرار دینے لگ گئے ہیں۔ ( جیسے کچھ عرصہ پہلے ایک مشہور شخصیت کی اولاد اپنی کامیابیوں کو اللہ کا فضل اور اللہ کا احسان قرار دے رھی تھی)۔ یہ سلسلہ اتا دراز ھوچکا ھے کہ ایک طرف ھم نماز پنجگانہ کی بھی پابندی کرتے ہیں اور دوسری طرف ھر گناہ کو اپنے لئے جائز اور درست سمجھتے ہیں۔ ھم اپنے بچون کو بھی یہی تعلیم دے رھے ہین کہ گناہ اپنی جگہ اور نماز روزہ اپنی جگہ ۔ ملاوٹ کی یہ عادت اس قدر ھم میں سرایت کر گئی ھے کہ دوائیون سے لیکر کھانے پینے کی اشیائ تک مین ایکدوسرے کو زھر کھلا رھے ہین۔
    اس کا سب سے خطرناک پہلو یہ ھے کہ ھر فتنہ اسی تلبیس کا سہارا لیکر پیدا ھوتا ھے اور پروان چڑھتا چلا جاتا ھے ۔ معصوم مسلمان منبر پر بیٹھے فتنے کی قال اللہ و قال رسول کی باتوں میں آکر گمراھی اور فساد کا وہ زھر بخوشی اپنے اندر اتار لیتے ہیں جو دنیا و آخرت میں ان کے ایمان کی تباھی کرکے رکھ دیتا ھے ۔۔
    یاد رکھئیے۔
    سیاہ اور سفید ایک نہیں ھوسکتے۔ حق اور باطل میں زمین و آسمان کا فرق ھوتا ھے۔ تلاوت اور ناچ گانا ایک ہی مجلس میں نہیں کیا جا سکتا ۔ یہ غلط ھے گناہ ھے شیطانی حربہ ھے۔
    ھمیں حکم ھے اے ایمان والو پوری طرح اسلام میں داخل ھو جاؤ۔ ھماری عظیم کتاب میں اللہ تعالی ارشاد فرماتا ھے "حق کو باطل کے ساتھ مت ملاؤ"۔ خدا کے لئے برائی اور گناہ میں تمیز کیجئیے ان کو ایک سمجھنے کی غلطی مت کیجئیے۔
    اوپر ایک ایسے ہی شیطان کی تصویر ھے جو اس شیطانی جنت میں پاکستان کا پرچم جسم پر لپیٹ کر گیا تھا جس کے بارے پچھلے دنوں پوسٹ لگائی تھی وہ ھاتھ میں کلمہ شریف والا کپڑا پھیلا کر کھڑا ھوا ھے تاکہ دکھنے والے اس کی شیطانی حرکات کو اس کے حلئے کی وجہ سے درست سمجھنے پر مجبور ھو جائیں۔
    مجنوں

Leave a Reply

© 2016 Pakalert Press. All rights reserved.